صحت عامہ

۔ اُردُو بلاگAHS Foundation

موسم سرما میں ہونے والی بیماریاں اور حفاظتی تدابیر

آج بچوں میں ایک بہت ہی عام بیماری نمونیاہے


SAAD WAHEED GILANI

نمونیا کیاہے؟☆

نمونیا، یا نظامِ تنفس کے ذیلی راستے میں انفیکشن ، اس اصطلاح کو پھیپھڑوں کے اندر انفیکشن کی وضاحت کے لئے استعمال کیا جاتا تھا۔ نمونیا کے زیادہ تر کیس وائرس کے سبب ہوتے ہں اور یہ نزلہ و زکام کی علامات کے بعدظاہرہو سکتے ہیں۔ بیکٹیریا کے سبب نمونیا کے کیسوں کی ٓتعداد کم ہوتی ہے۔نمونیا کی نشانیاں اور علامات بچوں میں نمونیا کی علامات مختلف ہوسکتی ہیں۔ وہ نزلہ وزکام یا نظامِ تنفس کے بالائی راستے کی علامات سے مماثلت رکھ سکتی ہیں۔ نمونیا کی عام نشانیاں اور علامات جن میں مندرجہ ذیل شامل ہیں:تیز بخارکھانسی سانس کا تیز تیز چلناسانس لینے میں دشواری پیش آناپھپہڑوں میں سے چٹخنےکی سی آوازیں آتی ہوں بھوک کا نہ لگناکھانسی یا بلغم کو نگلنے کی وجہ سے قے ہوناعام طورپرتھکن سے چور اور ذہنی، جِسمانی اور جذباتی طور پر پریشانی محسوس ہونا(معدہ)پیٹ کادرد)

آپ کا ڈاکٹر نمونیےکے لئےکیاکرسکتا ہے☆

اگر آپ کے ڈاکٹر کو نمونیا کا شبہ ہوتا ہے، تو ممکن ہے کہ آپ کے بچےکےسینےکاایکسرےہو۔ ایسا بھی ہو سکتا ہے کہ آپکے بچےکا ڈاکٹر کچھ خونکےٹیسٹ بھی کروائے۔ وائرس کے باعث ہونے والے نمونیے کاعلاج اینٹی بائیوٹک سے کرنےکی ضرورت نہیں، لیکن وائرل اور بیکٹیریئل کی الگ الگ وجوہات بتانا مشکل ہوسکتی ہیں۔ اُس کی بہترین طریقے سے دیکھ بھال کرنے سے پہلے آپ کے بچے کا ڈاکٹر بہت سے عوامل کو مدِنظر رکھے گا۔

اپنے بچے کی گھر پر نگہداشت☆

تمام اینٹی بائیوٹکس مکمل طور پرختم کریں اگر آپ کے بچے کو اینٹی بائیوٹک کا نسخہ تجویز کر دیا گیا ہے، تو اُس کو ساری دوائیں تجویزکردہ نسخے کےحساب سے ضرور لینی چاہیں۔ اپنے بچے کو اینٹی بائیوٹک کے علاج کاپوراکورس لازماً مکمل کروائیں، اگرچہ وہ بہتر محسوس کر رہا ہو تب بھی۔ اس کو دوبارہ ہونے سے روکنے، مدافعت، اور دوسری پیچیدگیوں کے لئے یہ بہت اہم ہے ۔بخار کا علاج اور نگرانی بخار کے لئے اسیٹامائنوفین یعنی )ٹائلینول، ٹیمپرا، یا دیگر برانڈز(، یا آئیبیوپروفین )موٹرین، ایڈول، یا دیگر برانڈز( کا استعمال کریں۔ اپنے بچے کو اے ایس اے)اسی ٹائل سیلی سیلک ایسڈ یا ایسپرین

ڈسپرین ( ہرگز نہ دیں۔اپنے بچےکے جسم میں پانی کی مقدارکو برقرار رکھیں جسم میں پانی کی مقدار کو برقرار رکھنے کے لئےاپنے بچےکو وافر مقدار میں مائعات پلائیں۔  آپ کے بچے کی بھوک کم ہو جانے کا بھی امکان ہے، لیکن اس میں بہتری آئے گی جب ان میں انفیکشن ٹھیک ہونا شروع ہو جائے گی اور وہ بہتر محسوس کرنے لگیں گے۔شروع میں آپکے بچے کو زیادہ کھانے کی حاجت نہیں ھو گی۔ لیکن جونھی انفیکشن میں آفاقہ ھونا شروع ھو گا تو بچہ اپنے آپ کو بہتر محسوس کرنے لگے گا تو بتدریج اسکی بھوک بڑھ جا ئےگی۔

خفاظتی تدابیر ☆

دھوئیں والی جگہوں سے گریز کریں اپنے بچےکو دھوئیں اور پھیپھڑوں میں سوزش یا خراش پیدا کرنے والی چیزوں سے دور رکھیں کھانسی کی علامات اس بات کا بھی امکان ہے کہ آپ کے بچے کی کھانسی صحیح ہونے سے پہلے شدیدترین ہو جائے۔ ۔ ممکن ہے کہ اس کی کھانسی کچھ ہفتوں تک جاری رہے۔

طبی مدد کب حاصل کریں☆

اپنے بچہ کے معمول کے ڈاکٹر سے رابطہ کریں اگر:آپ کے بچےکی کھانسی تین ہفتے سے زیادہ عرصے تک جاری رہتی ہےاینٹی بائیوٹکس شروع کرنے کے بعد آپ کے بچے کا بخار 3 دن سے زیادہ عرصے تک رہتا ہےاپنے بچے کو قریبی ایمرجینسی ڈیپارٹمینٹ میں لے جائیں،  اگر آپکے بچہ کو :سانس لینے میں دشواری حد سے زیادہ بڑھ رہی ہوبہت زرد پڑ جائے یا ہونٹ نیلے ہوجائیں اینٹی بائیوٹک خوراکوں کی قےکر رہا ہو یا پینے والی چیزیں پینے سے منع کر رہا ہودیکھنے میں بہت بیمار نظر آرہا ہواہم نکات نمونیا پھیپھڑوں کی ایک انفیکشن ہے۔ وائرس یا کبھی کبھار بیکٹیریا اِس کا سبب بن سکتے ہیں۔اگر آپ کے بچےکو اینٹی بائیوٹکس کا نسخہ تجویز کیا جاتا ہے، تو اس بات کو یقینی بنائیں کہ وہ اینٹی بائیوٹکس کا پوراکورس مکمل کرتا ہے، اگرچہ کہ آپکا بچہ بہتر بھی محسوس کر رہا ہوبچے کو پُرسکون اور جسم میں پانی کی مقدار کو برقرار رکھیں۔

。。。。


(2)

  • Typhoid Fever (ٹائیفائیڈ )

  • ایک صحت مند اور تندرست انسان ہی اپنے تمام کام بخوبی سر انجام دے سکتا ہے بیماری کسی بھی حالت میں ہو یہ انسان کو بے چین کر دیتی ہے اور اس کے معمول کے کام رک جاتے ہیں۔ موسمی بخار کا ہو جانا کوئی بڑی بات نہیں انسان جلد ہی ٹھیک بھی ہو جاتا ہے.
  • لیکن ٹائیفائیڈ بخار ایک مہلک مرض ہے اور یہ ایک چھوت کی بیماری ہے ٹائیفائیڈ ایک جراثیم (سالمو نیلا ٹائے فی
  • ☆Salmonella Typhi.کی وجہ سے ہوتا ہہے                                                                     ۔جس شخص کو ٹائیفائیٖڈ بخار ہوجائے اس کے جسم کا درجہ حرارت “103سے 104” ڈگری فارن ہائیٹ تک ہو جاتا ہے۔اس بیماری کا حملہ بارش،گرمی اور خزاں کے موسم میں ہوتا ہے ۔اس کے علاوہ گندہ پانی بھی ٹائیفائیڈ کا سبب بنتا ہے۔
  • ※جراثیم ٹائیفائیڈ کےمریض سے دوسرے صحت مند انسان میں بھی منتقل ہو جاتے ہیں اور وہ بھی اس بخار کا شکار ہو جاتا ہے۔بازار میں پڑی کھلی اشیاء یا خراب اشیاء کے کھانے سے بھی اس بیماری میں مبتلا ہونے کا خدشہ ہر وقت موجود رہتا ہے.
  • SYMPTOMS.  علامات
  • سر درد کاہونا،○بھوک کا نہ لگنا،○سارے جسم میں درد ہونا،○جلد پر سرخ دھبے نمودار ہونا، ○پیچش، ○پسینہ آنا٬○ نیند کا نہ آنا○، خشک کھانسی،○ پیٹ درد،○ قبض٬○ زبان کا میلا اور سفید ہو جانا،○متلی، اور کمزوری ہیں۔
    عام موسمی بخار سے انسان دو سے چار دن مین تندرست ہو جاتا ہے لیکن اگر بخار شدت اختیار کر لے تو پھر ڈاکٹر سے ضرور مشورہ کرنا چاہیئے اور اس کے ٹیسٹ فوری طور پر کروا لینے چاہیں تاکہ بروقت تشخیص ہو سکے اور اس کا علاج ممکن ہو۔
    خدانخواستہ اگر دیر ہو جائے تو مریض کی جان جانے کا خطرہ ہوتا ہے۔اور سب سے بڑا مسئلہ کہ یہ ایک مریض سے دوسرے مریضوں کو ہو جاتا ہے ۔یہ موذی مرض کئی ہفتوں اور مہینوں تک رہ سکتا ہے ۔اگر مریض تندرست بھی ہو جائے تو پھر بھی اس کا جراثیم اس میں موجود رہتا ہے اس لئے ایسے مریض جن کو ٹائیفائیڈ کا حملہ ہو چکا ہو اور اب وہ تندرست ہو چکا ہو جب بھی رفع حاجت سے فارغ ہو تو اسے اپنے ہاتھ اچھی طرح صاف کرنے چاہئیں۔ہرممکن کوشش کریں کہ ٹائیفائیڈ کے مریض کو کھانا پکانے سےروکیں جب تک یہ ممکن نہ ہو جائے کہ اس کے جسم سے تمام جراثیم کا خاتمہ ہو چکا ہے۔اور نہ ہی اس کے ساتھ کھانا کھائیں۔
    ☆ٹائیفائیڈ سے کیسے محفوظ رہا جا سکتاہے؟٭▽ہمیشہ تازہ اور صاف ستھری غذا کا استعمال کریں٭ ▽باہر کے کھلے پکوان اور آلودہ مشروبات کا استعمال نہ کریں۔٭پانی ہمیشہ ابال کر پیئیں۔٭ باہر کی گندی برف کی بجائےفریج میں صاف پانی سے بنائی گئی برف کا استعمال کریں۔٭ سبزی یا پھل کا استعمال جب بھی کریں تو انہیں اچھی طرح دھو کر صاف کر لیں۔٭ تائیفائیڈ کے مریض کے برتن علیحدہ کر دیں۔٭ مریض کے کپڑے روزانہ صاف کریں اور بدلیں۔٭ مصالحہ جات اور مرغن غذاؤں سےمکمل پرہیز رکھیں۔٭ جب مریض تندرست ہو جائے تواس کے استعمال میں آئی تما اشیاء بشمول بستر کے اچھی طرح دھو کر دھوپ میں سکھا لیں۔٭ مریض کے تیماداری کرنے والوں کو بھی اپنا ٹیسٹ کروا لینا چاہئے۔٭ مریض کو آرام دہ اور پر سکون کمرہے میں رکھا جائے۔
  • خطرناک پیچیدگیاں.

ٹائی فائڈ میں سب سے اہم اور خطرناک پیچیدگی انتڑیوں کے زخم اور ان سے خون جاری ہونا اور بعض اوقات انتڑیوں میں سوراخ ہونے سے ہوتی ہے۔ مریض کی حالت اس حدتک تشویشناک ہو جاتی ہے کہ اسکے لئے عمل جراحی یا سرجری  کرنا پڑتی ہے ۔

اگرٹائی فائڈ میں مبتلا مریض کا درجۂ حرارت اچانک کئی درجے گر جائے تو انتڑیوں میں خون کا جمع ہو جانا نہایت تشویش ناک ثابت ہو سکتا ہے۔ ایسی حالت میں مریض کوکسی اسپتال میں داخل کروانا دانائی ہے۔ ایسی پیچیدگیاں بیماری کے تیسرے یا چوتھے ہفتے میں وجود میں آتی ہیں۔ دورانِ مرض ، مریض کی حالت  پرکڑی نگاہ رکھنا تیمار داروں کا فرض ہے کیونکہ کسی بھی وقت کوئی بھی علامت ظاہرہوسکتی ہے اور مریض کے لیے باعث پریشانی ہوسکتی ہے۔

°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°°


(3)

ہائ بلڈ پریشر

(HIGH BLOOD PRESSURE)

(BLOOD PRESSURE) ……… بلڈ پریشر
جب آپ کا دل دھڑکتا ہے تو خون آپ کے جسم میں گردش کرتا ہے اور اسے مطلوب توانائی اور آکسیجن مہیا کرتا ہے۔ خون گردش کے دوران نسوں کی دیواروں پر دباؤ ڈالتا ہے۔ اس دباؤ کو ہی بلڈ پریشر کہا جاتا ہے۔

بلڈ پریشر کو کیسے جانا جائے؟☆

بلڈ پریشر کو جاننے کا واحد طریقہ یہ ہے کہ اس کی پیمائش کی جائے۔اور اس کے لیےایک  عام [SPHEGNOMENOMETER[     آلہ   بی پی آپریٹس 

کہا جاتاہےاس کی مدد سے بلڈ پریشر کی پیمائش کی جاتی ہے بلڈ پریشر کو دو عداد میں لکھا جاتاہے

…. جب بلڈ پریشرکی پیمائش ہوتی ہے تو اسے دو اعداد میں لکھاہے مثلا بلڈ پریشر 120/80 یا 80 نیچے اور120 .

اوپر۔ ہائی بلڈ پریشراگر آپ کا بلڈ پریشر نیچے 90  اور اوپر 140  یا اس سے زیادہ ہو اور یہ کیفیت کئی ہفتوں تک برقرار رہے تو آپ کو ہائی بلڈ پریشر ہوسکتاہے یا اگر دونوں میں سے ایک عدد بھی زیادہ ہو تو آپ کو ہائی بلڈ پریشر ہوسکتا ہے۔ہائی بلڈ پریشر سے آپ اپنے آپ کو بیمارتو محسوس نہیں کریں گے لیکن یہ صحت کے لئے انتہائی خطرناک ہوسکتا ہے۔ اگر اس کو کم نہ کریں تو یہ دل، خون کی نسوں اور دوسرے اعضاء کو برباد کرسکتا ہے۔ یہ آپ کی صحت کے لئے سنگین مسائل پیدا کرسکتا ہے۔اگر آپ کو ذیابیطس ہو تو ہائی بلڈ پریشر آپ کے دل اور خون کی نسوں کو اور بھی زیادہ برباد کرسکتا ہے۔ اس لئے آپ کو چاہئے کہ اپنا بلڈ پریشر 80 نیچے اور 130 اوپر سے کم رکھیں۔

ہائی بلڈ پریشرکس طرح جسم کے حصوں کو متاثر کرتا ہے؟

ہائی بلڈ پریشر کےدل پر اثرات:○

ہائی بلڈ پریشر دل کے دوروں کا ایک بڑا سبب ہے۔ دل کا دورہ اس وقت پڑتا ہے جب آپ کے دل کو خون پہنچانے والی نسیں بند ہوجاتی ہیں یا پھٹ جاتی ہیں۔ ہائی بلڈ پریشر کے سبب دل کی دھڑکن بن ہوسکتی ہے یا دل پھیل کر بڑا ہوسکتا ہے۔

ہائی بلڈ پریشر کاگردےپر اثرات○

ہائی بلڈ پریشرگردوں کو خون سپلائی کرنے والی نسوں کو برباد کرکے گردوں کی بیماریاں پیدا کرسکتا ہے۔

دماغ پر اثرات ○

ہائی بلڈ پریشر فالج کا بھی ایک بڑاسبب ہے۔ فالج اس وقت لاحق ہوتا ہے جب آپ کے دماغ کو خون پہنچانے والی نسیں بند ہوجاتی ہیں

(Feet)     ۔ پاؤں /پیر

ہائی بلڈ پریشر آپ کے پیروں کی خون کی نسوں کو تنگ کردیتا ہے جس سے ان میں خون کا بہائو مشکل ہوجاتا ہے اس کی وجہ سے چلنے میں تکلیف ہوتی ہے۔

اسباب○

چاۓ کا کثرت سے استعمال

،زیادہ جاگنا،

مرغن غذائیں تیز مصالحہ دار اشیاء کا استعمال

خواہشات کو بڑھانے والی ادویات کا استعمال کرنا

،شراب نوشی اور چرس

علامات○

دل کے فعل میں تیزی  ۔  سانس چھوٹاہونا۔اختلاج قلب ۔ مریض منہ کھول کر سانس لیتا ہے ۔ دردسر ۔ بے چینی ۔ دل کے مقام پربوجھ اورگھٹن محسوس ہونا۔

4 Responses

  1. Basit says:

    Very useful information, great work, keep it up..

  2. Mohsin Saeed Gilani says:
    ہم آپ اور اے ایچ ایس فاؤنڈیشن کے سارے عملے کے دل کی گہرائیوں سے شکر گزار کے آ پ ہمیں ا تنی مفید معلومات فراہم کر رہے ہیں اللہ آ پ کا حامی و ناصر ہو
  3. Mohsin Saeed Gilani says:
    بہت ہی اچھا اور معلوماتی پیغام ہے ہم امید رکھتے ہیں کے آ پ اسی طرح کے مفید پیغامات عوام تک پہنچاتے رہیں گے اللہ آپ کو اس کی جزاء عطا فرمائے
  4. admin admin says:

    Very informative. Keep good work up and adding more useful information for general public.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

en_USEnglish
en_USEnglish